This document demonstrates all of the characters in the font. It is organized by Unicode block. Alternate glyphs that are available through features are demonstrated in the Features document. At the end is a sample demonstrating Arabic shaping and another example of running text.

Basic Latin:

Regular: ! ” # $ % & ‘ ( ) * + , – . / 0 1 2 3 4 5 6 7 8 9 : ; ? @ A B C D E F G H I J K L M N O P Q R S T U V W X Y Z [ \ ] ^ _ ` a b c d e f g h i j k l m n o p q r s t u v w x y z { | } ~

Latin-1 Supplement:

Regular: ¡ ¢ £ ¤ ¥ ¦ § ¨ © ª « ¬ ­ ® ¯ ° ± ² ³ ´ µ ¶ · ¸ ¹ º » ¼ ½ ¾ ¿ À Á Â Ã Ä Å Æ Ç È É Ê Ë Ì Í Î Ï Ñ Ò Ó Ô Õ Ö × Ø Ù Ú Û Ü Ý Þ ß à á â ã ä å æ ç è é ê ë ì í î ï ñ ò ó ô õ ö ÷ ø ù ú û ü ý þ ÿ

Latin Extended-A:

Regular: ı OE oe Š š Ÿ Ž ž

Latin Extended-B:

Regular: ƒ

Spacing Modifier Letters:

Regular: ˆ ˇ ˉ ː ˘ ˙ ˚ ˛ ˜

Combining Diacritical Marks:

Regular: ◌̧ ◌̀ ◌́ ̂◌ ◌̃ ̈◌ ◌̊ ◌̌ ◌̧ CGJ (U+034F)

Greek and Coptic:

Regular: none

General Punctuation, Superscripts and Subscripts, Supplemental Punctuation:

Regular: ‐ – ‒ – — ― ‘ ’ ‚ “ ” „ † ‡ • ‥… ‰ ‹ › ⁄ ⁴

Currency Symbols:

Regular:

Letterlike Symbols, Geometric Shapes:

Regular:™ ◌

Arabic:

Regular:

؀ ؁ ؂ ؃ ؄ ؉ ؊ ؋ ، ؍ ؎ ؏ ◌ؐ ◌ؑ ◌ؒ ◌ؓ ◌ؔ ◌ؕ ؛ ؜ ؟ ؠ ء آ أ ؤ إ ئ ا ب ة ت ث ج ح خ د ذ ر ز س ش ص ض ط ظ ع غ ف ق ك ل م ن ه و ى ي ◌ً ◌ٌ ◌ٍ ◌َ ◌ُ ◌ِ ◌ّ ◌ْ ◌ٓ ◌ٔ ◌ٕ ◌ٖ ◌ٗ ◌٘ ◌ٙ ◌ٚ ◌ٛ ◌ٞ ◌ٟ ٠ ١ ٢ ٣ ٤ ٥ ٦ ٧ ٨ ٩ ٪ ٫ ٬ ٭ ٮ ٯ ٰ ٱ ٲ ٳ ٴ ٵ ٹ ٺ ٻ ټ ٽ پ ځ ڃ ڄ څ چ ڇ ڈ ډ ڊ ڋ ڎ ڐ ڑ ړ ڔ ڕ ږ ڗ ژ ڙ ښ ڜ ڞ ڡ ڤ ڥ ک ګ گ ڰ ڱ ڳ ڵ ڷ ڹ ں ڻ ڼ ھ ۀ ہ ۂ ۃ ۄ ۅ ۆ ۇ ۈ ۉ ۊ ۋ ی ۍ ێ ۏ ې ے ۓ ۔ ە ◌ۜ ۝ ◌۠ ◌ۡ ◌۪ ◌ۭ ۰ ۱ ۲ ۳ ۴ ۵ ۶ ۷ ۸ ۹ ۻ

Arabic Supplement:

Regular:

ݙ ݚ ݜ ݣ ݨ ݩ ݪ ݫ ݬ ݭ ݮ ݯ ݰ ݱ ݲ ݳ ݴ ݵ ݶ ݷ ݸ ݹ ݺ ݻ ݼ ݽ ݾ ݿ

Arabic Extended-A:

Regular:

ࣇ ◌ࣿ

Arabic Presentation Forms:

Regular:

﴾ ﴿ ﷲ ﷺ ﷻ ﷼ ﷽

Arabic Shaping (some basic shapes):

Regular:

ا ‍ا ب ببب ج ججج د ‍د ر ‍ر س سسس ص صصص ط ططط ع ععع ف ففف ق ققق ك ككك ل للل م ممم ن ننن ه ههه و ‍و ي ييي ک ککک ے ‍ے لا

‭۝123‬ ‭۝١٢٣‬

Urdu MSA UDHR #26:

دفعہ ۲۶۔

(۱) ہر شخص کو تعلیم کا حق ہے۔ تعلیم مفت ہو گی، کم سے کم ابتدائی اور بنیادی درجوں میں۔ ابتدائی تعلیم جبری ہو گی۔ فنّی اور پیشہ ورانہ تعلیم حاصل کرنے کا عام انتظام کیا جائے گا اور لیاقت کی بنا پر اعلیٰ تعلیم حاصل کرنا سب کے لئے مساوی طور پر ممکن ہو گا۔

(۲) تعلیم کا مقصد انسانی شخصیت کی پوری نشوونما ہو گا۔ اور وہ انسانی حقوق اور بنیادی آزادیوں کے احترام میں اضافہ کرنے کا ذریعہ ہو گی۔ وہ تمام قوموں اور نسلی یا مذہبی گروہوں کے درمیان باہمی مفاہمت، رواداری اور دوستی کو ترقی دے گی اور امن کو برقرار رکھنے کے لئے اقوامِ متحدہ کی سرگرمیوں کو آگے بڑھائے گی۔

(۳) والدین کو اس بات کے انتخاب کا اوّلین حق ہے کہ ان کے بچوں کو کس قسم کی تعلیم دی جائے گی۔